اسپیشل ڈی جی پی پرجسمانی ہراساں کرنے کا مقدمہ درج

DGP

خاتون آئی پی ایس نے کی تھی شکایت
چنئی(آئی این ایس انڈیا) تمل ناڈو کے سابق اسپیشل ڈی جی پی (لا اینڈ آرڈر) پر خاتون کو ہراساں کرنے کا معاملہ درج کیا گیا ہے۔ ایک دن پہلے ہی انہیں اس عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔ راجیش داس کے خلاف خاتون آئی پی ایس آفیسر کی شکایت پر مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ راجیش داس کے خلاف اتوار کے روز مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ ان کے خلاف مختلف دفعات کے تحت ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔آئی پی ایس افسر کا کہنا ہے کہ یہ الزامات سیاست سے متاثر ہوکر لگائے گئے ہیں۔ بتایا جارہا ہے کہ چھیڑ چھاڑ کا واقعہ 22 فروری کو پیش آیا تھا۔ شکایت موصول ہونے کے دو دن بعد انہیں اپنے عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔ وزارت داخلہ نے اس معاملے کی تحقیقات کے لئے چھ رکنی کمیٹی تشکیل دی ہے۔ اس معاملے میں وزیر اعلی ایڈاپڈی پلانی سوامی نے بھی ایک بیان دیا ہے۔ ملزم آئی پی ایس افسر کا کہنا ہے کہ یہ سارا واقعہ سیاست سے متاثر ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ شکایت مکمل طور پر بے بنیاد ہے اور تحقیقات میں سب کچھ ثابت ہوجائیگا۔ یہ واقعہ یہاں کے پورے محکمہ میں زیربحث ہے۔ کوئی بھی افسر اس معاملے پر کھلے عام بیان دینے کو تیار نہیں ہے۔ نیز ملزم اور شکایت کنندہ دونوں ہی آئی پی ایس افسر ہیں۔میڈیا رپورٹس کے مطابق یہ واقعہ گذشتہ اتوار کو تریچی چنئی شاہراہ پر پیش آیا۔ رات دس بجے جب وزیر اعلی کا قافلہ انتخابی پروگرام کے بعد کونگو کے علاقے سے باہر جارہا تھا۔ اسی دوران سینئر افسر نے خاتون آئی پی ایس کو کار میں بیٹھالیا۔ عام طور پر سیلوٹ کے بعد قافلے میں شامل ہونا پڑتا ہے، لیکن یہاں ملزمین نے خاتون آئی پی ایس کو اندر بیٹھا لیا۔کار 40 منٹ تک چلتی رہی اور ایک ایسی جگہ پر رک گئی جہاں انہیں کئی عہدیداروں سے ملنا تھا۔ جیسے ہی کار رکی، خاتون آئی پی ایس وہاں سے بھاگنے لگیں اور فورا اپنی کار میں بیٹھ گئیں۔ اس کے بعد انہوں نے شکایت کی۔ حکام کا کہنا ہے کہ اس معاملے کی تحقیقات کی جارہی ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.